وحدت نیوز، گزشتہ روز ایم ڈبلیو ایم پاکستان کے سیکرٹری امور خارجہ اور مجلس علماء امامیہ پاکستان کے سربراہ حجۃ الاسلام والمسلمین ڈاکٹر سید شفقت حسین شیرازی نے حوزہ علمیہ قم میں ایم ڈبلیو ایم شعبہ قم کے زیر اہتمام م منعقدہ یوم القدس کی ایک تقریب اور دعوت افطار سے خطاب کرتے ہوئے کہا مسئلہ فلسطین امت مسلمہ کے مسائل میں سرفہرست ہے۔ فلسطین امت مسلمہ کا قلب ہے جس کے زخم فراموش نہیں کیے جاسکتے۔ ح ا ڈاکٹر سید شفقت حسین شیرازی نے کہا فلسطین کے مسئلے کو زندہ رکھنے کے لیے امام خمینیؒ نے جمعۃ الوداع کو یوم القدس قرار دیا۔ انہوں نے کہا امام خمینی ؒ کی یہ حکمت اتنی کامیاب ہوئی کہ وہ مسئلہ جسے خائن مسلمان سربراہان اور اسرائیل و امریکہ مل کر طاق نسیان کے سپرد کرنا چاہتے تھے وہ مسئلہ آج دنیا بھر میں نمایاں ہوگیا ہے۔ دنیا بھر کی انصاف پسند طاقتیں آج مظلوم فلسطینیوں کے ساتھ کھڑی ہیں۔ یہ امام خمینی ؒ کی حکمت عملی کی کامیابی ہے۔

ح ا ڈاکٹر سید شفقت حسین شیرازی نے کہا مردہ باد امریکہ کا نعرہ ہم نے شہید عارف حیسن الحسینی اور حضرت امام خمینی ؒ سے لیا ہے اور سامراج مخالفت کا علم ہمیشہ بلند رکھا ہے چاہے حالات جیسے بھی ہوں۔ آج یہ سامراج مخالف نعرہ ملک پاکستان کے ایوانوں سے بلند ہورہا ہے تو یہ نہ صرف ملت تشیع کے موقف کی تائید بلکہ سامراج مخالفت تحریک کی کامیابی ہے۔ انہوں نے کہا اس موقع پر شہید قائد ؒ ہوتے تو وہ یقینا سامراج مخالف کیمپ میں سب سے اگلی صفوں میں کھڑے ہوتے۔

ح ا ڈاکٹر سید شفقت حسین شیرازی نے کہا پاکستان میں اس وقت ملی سطح پر مجلس وحدت مسلمین اور اس کے سربراہ حجت الاسلام والمسلمین علامہ راجا ناصر عباس جعفری اور امامیہ اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن پاکستان بطور ملک گیر طلبہ نمائندہ تنظیم سامراج مخالف کیمپ میں نظر آتی ہے۔ انہوں نے کہا ہم سمجھتے ہیں رہبر کبیر امام خمینی ؒ کے پیروکاروں کو اس وقت بغیر کسی مصلحت اور تذبذب کے سامراج مخالفت کا علم بلند کرنا چاہئے کیونکہ یہ ہمارے نظریے اور موقف کی کامیابی اور تائید کا مرحلہ ہے۔